Abu Hurairah (Radi Allahu Unho) Used to Write Ahadeeth

کان یکتب ابوہریرۃ رضی اللہ تعالیٰ عنہ احادیث

حضرت ابوہریرۃ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا احادیث قلم بند کرنا

Abu Hurairah (Radi Allahu Unho) Used to Write Ahadeeth


Hadith in Arabic


أخرجه بن وهب من طريق الحسن بن عمروبن أمية قال تحدث عندأبي هريرة بحديث فأخذبيدي إلى بيته فاراناكتبامن حديث النبي صلى الله عليه وسلم وقال هذاهومكتوب عندي قال بن عبدالبرحديث همام أصح ويمكن الجمع بأنه لم يكن يكتب في العهدالنبوي ثم كتب بعده


Urdu Translation


روایت کیا ہے (ہمامؒ) بن وہب نے الحسن بن عمرو بن امیۃ ؒکے طریق سے کہا میں نے بیان کی ابوہریرۃ (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) کے سامنے ایک حدیث ، پس پکڑ کر ہاتھ میر ا لے گئے مجھ کو اپنے گھر ، تو دکھائیں ہمیں کتابیں احادیث النبی ﷺ کی، اور کہا یہ (حدیث)وہ ہے جو لکھی ہوئی ہے میرے پاس (کتاب میں) کہا ابن عبدالبرؒ نے ہمام بن وہب ؒ کی حدیث صحیح ترین ہے (سند کے اعتبار سے) اور دونوں باتوں کا (بخاری ؒ کی ایک روایت میں فرمایا ابو ہریرۃ رضی اللہ تعالیٰ نےکہ میں احادیث نہیں لکھتا تھا) جمع ہو جا نا بلاشبہ اس وجہ سے ہے کہ صرف حفظ کیں(احادیث) زمانہ نبوی(ﷺ) میں پھرلکھ بھی لیا(احادیث کوکتاب میں )بعد اس کے ۔۔(فتح الباری، جامع بیان العلم )۔ہمام بن وہب ؒ کی کتاب صحیفہ ہمام کے نام سے مشہور ہے اس کوامام احمد بن حنبل ؒ نے اپنی مسند میں ج2 ص 312 سے 318 میں نقل کیا ہے۔ المسائل والدلائل ص80


English Translation


Hammam bin Wahab narrated through Alhassan bin Umayyah, he said ,”I stated hadith in front of Abu Hurairah(Razi Allahu Unho)”. He caught my hand and took me to his home, showed me books of ahadeeth of Prophet (ٍصلی اللہ علیہ وسلم) and said, “these are written (books) with me”. Ibn Abdul Bar says that ahadeeth of (narrated by) Hammam bin Wahab are the most correct (regarding the narrators) and both events (in Sahih BuKhari Abu Hurairah (رضی اللہ عنہ) says، “I do not used to write”, and now، he showed his books) can be summed in this way that he only learnt ahadeeth by heart in age of Prophet (ٍصلی اللہ علیہ وسلم) and wrote (in books) afterwards…(Fath ul Bari, Jamiha Bian ul Elm), Book of Hammam was known as “Saheefah“.Imam Ahmad included it in his “Musnad” Part 2, pages 312 to 318.(Almsaail wal Dlaail Page-80)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *