Allah Promised with Sahabah to Make Them Rulers

وعداللہ الصحابہ ان یجعلھم خلفاء الارض

Allah Promised with Sahabah to Make Them Rulers

اللہ کی طرف سے صحابہ کو خلافت ملنے کاوعدہ


Hadith in English, Urdu & Arabic


(Allah has promised to those of you who believe and do righteous good deeds that He will surely make them rulers in the earth …..An-Noor, 55) This is a promise by Allah for Holy Prophet ﷺ that no doubt He (Allah) will make his (of Holy Prophet ﷺ) followers (Ummah) the rulers on the earth, means, He will make them leaders and rulers for the people. He will also set the area under their command right by their rule, and people will bow their heads in front of them. Definitely, he will exchange their fear with the peace and will make decision makers out of them. And Allah did the same….Imam Muslim bin ul Hajaj narrates from Jabir bin Samurah (Allah pleased with him) that he has listened from Rasoolullah ﷺ,saying, “This (rule) will run in the same way until twelve rulers will be elected out of them (the companions of Rasoolullah ﷺ).” Again, Rasoolullah ﷺ said few words, which I could not listened, I asked my father that what did he say? He answered, “(he said) All rulers will be (elected) from Quraysh (his tribe).” This hadith has been narrated in Al-Bukhari, from Shobha (a famous scholar) and he (copied) from Abd ul Malik bin Umair, (another scholar) in Sahih Mulim hadith No.1821 and in Sahih Bukhari, hadith No. 7222. (Tafseer Ibn e Kaseer)

{وَعَدَ اللَّهُ الَّذِينَ آمَنُوا مِنْكُمْ وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ لَيَسْتَخْلِفَنَّهُمْ فِي ۔۔۔ (55) }هذا وعد من الله لرسوله صلى الله عليه وسلم بأنه سيجعل أمته خلفاء الأرض، أي: أئمةَ الناس والولاةَ عليهم، وبهم تصلح البلاد، وتخضع لهم العباد، ولَيُبدلَنّ بعد خوفهم من الناس أمنا وحكما فيهم، وقد فعل تبارك وتعالى ذلك.۔۔۔قال الإمام مسلم بن الحجاج۔۔۔عن جابر بن سَمُرَة قال: سمعتُ رسولَ الله صلى الله عليه وسلم يقول: “لا يزال أمر الناس ماضيا ما وليهم اثنا عشر رجلا” . ثم تكلم النبي صلى الله عليه وسلم بكلمة خفيت عني فسألت أبي: ماذا قال رسول الله صلى الله عليه وسلم؟ فقال: “كلهم من قريش”.ورواه البخاري من حديث شعبة، عن عبد الملك بن عمير، به صحيح مسلم برقم (1821) وصحيح البخاري برقم (7222) ۔ تفسیر ابن کثیر

ترجمہ۔ { وعدہ کرلیا اللہ نے ان لوگوں سے جو ایمان لائے تم میں سے اور کئے ہیں انہوں نے نیک اعمال ، ضرور بالضرور حاکم بنا دے گا ان کو زمین میں ۔۔۔النور 55}یہ وعدہ ہے اللہ کی طرف سے رسول اللہ ﷺ کےلئے کہ بے شک وہ (اللہ) عنقریب بنادے گا ان (رسول اللہ ﷺ)کی امت کو خلفاء زمین کا ، یعنی لوگوں کے لئے امام اور حکمران بنادے گاان پر ، اوران کے ذریعے اصلاح کردے گا ان کے علاقوں میں ،اور لوگو ں کو جھکادے ان (کی اطاعت ) کے لئے ، اور ضرور بالضرور بدل دے گا لوگوں کے خوف کو امن سے اور فیصلہ کردینے والا بنادےگا انہیں ان (لوگوں ) میں، اور بے شک اللہ تعالیٰ نے وہی کیا۔۔۔ روایت کی ہے الامام مسلم ؒ بن الحجاج نےجابر بن سمرۃ (رضی اللہ تعالیٰ عنہ)سے کہا کہ سنا میں نے رسول اللہ ﷺ کو فرماتے ،” لو گو ں کا امر (خلافت) چلتا رہے گا یہاں تک کہ خلیفہ بن جائیں گے ان میں سے بارہ آدمی ” پھر نبی ﷺ نے کچھ کلام فرمایا جو میں نہیں سن سکا، میں نے پوچھا اپنے اباجان سے کہ کیا فرمایا رسول اللہ ﷺ نے ؟ تو کہا (کہ ارشاد فرمایا )” وہ تما م (خلفاء )قریش میں سے ہو ں گے “اس (حدیث) کی روایت کی ہے البخاری ؒ نے شعبہؒ کی حدیث سے جو روایت کی ہے عبدالملک بن عمیر نے، اور صحیح مسلمؒ میں (حدیث) نمبر 1821 اور صحیح البخاریؒ میں (حدیث)نمبر 7222۔ تفسیر ابن کثیر

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *