Compensation on Ceasing Auxiliary Fast is Necessary

من صام وصلی تطوعا فان افسدہ فعلیہ القضاء

Compensation on Ceasing Auxiliary Fast is Necessary

 نفل روزہ ٹوٹنے پر قضاء روزہ رکھنا واجب ہے


1st Hadith in English, Urdu & Arabic


{O you who believe! Obey Allah, and obey the Messenger (Muhammad SAW) and render not vain your deeds} (verse 33, Muhammad ﷺ)

Our scholars has concluded a reason from this verse, when a person ceases an auxiliary salat or fast (it should not be wasted by ceasing) after start. It is not allowed to cease. Because ceasing is just wasting of a deed. Certainly, Allah has prohibited it. (Tafsir Al-Qurtubi)

قولہ تعالی{ يا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا أَطِيعُوا اللَّهَ وَأَطِيعُوا الرَّسُولَ وَلا تُبْطِلُوا أَعْمالَكُمْ (33)محمد(ﷺ }۔

احتج علماؤنا وغيرهم بهذه الآية على أن التحلل من التطوع- صلاة كان أو صوما- بعد التلبس به لا يجوز، لان فيه إبطال العمل وقد نهى الله عنه ۔ تفسیر القرطبیؒ

ترجمہ۔ اے لوگو جو ایمان لائے ہو،اطاعت کرو اللہ کی اور اطاعت کرو اوررسول () کی اور نہ ضائع کرو اعمال اپنے۔ (آیت 33محمد ﷺ) ۔۔۔دلیل ماناہے ہمارے علما نےاس آیت سے اس بات پر کہ توڑا جائےنفل ،نماز تھی یا نفل روزہ (تو ان کو توڑکر ضائع نہ کرو)، بعد اس (نفل نماز یا روزہ) میں لگ جانے کے (توڑنا)جائز نہیں ہے۔کیوں کہ اس میں عمل کو باطل کرنا ہے اور بے شک اللہ نے منع فرمایا اس بات سے ۔ (تفسیر القرطبی ؒ)۔


2nd Hadith in English, Urdu & Arabic


So, Abu Hanifa said, “It is unlawful to cease (auxiliary salat or fast). If he did so, he will have to compensate, due to saying of Allah, “and render not vain your deeds”. (Tafseer Hakki)

فقال ابو حنيفة لم يجزله الخروج منه فان أفسده فعليه القضاء لقوله تعالى {ولا تبطلوا اعمالكم}تفسیر حقیؒ

ترجمہ۔  پس فرمایاابوحنیفہ ؒ نے جائز نہیں ہے اس کے لئے باہر نکلنا (توڑنا) اس (نفل نمازیا روزہ) کو ، اگر اس نے توڑدیا اس کو تو اس کے اوپر قضاء (واجب ) ہے ، بوجہ اس (اللہ ) تعالیٰ کے قول کے{ اورنہ ضائع کرو اپنے اعمال } تفسیر حقیؒ۔


3rd Hadith in English, Urdu & Arabic


4639. Ayesha (Radi Allahu Anhu) narrates, “I and Hafsa (Radi Allahu Anhu) both were fasting (auxiliary). Meanwhile, a meal was sent to us, and we were attracted (due to starve) to it so, we have eaten some of it. When Holy Prophet ﷺ came, so, Hafsa (Radi Allahu Anhu) was quicker than me in asking, because she was the daughter of his father (she copied him in learning knowledge). She said, “O Rasoolullah (), we both were fasting, and we were offered meal. Due to hunger we ate some of the meal.(What should we do)?” Holy Prophet ﷺ said, “You both should compensate on another day.” Hussain Salim Asad said, “Chain of narrators is correct”. (Musnad Abu Ya’la) and Abd ur Rzzak narrated in Musannaf, at No 7793, and Albehky narrated in Marfat us Sunnah Wal athar, at No 2560.

عن عائشة قالت : كنت أنا و حفصة صائمتين فعرض لنا طعام اشتهيناه فأكلنا منه فجاء رسول الله صلى الله عليه و سلم فبدرتني إليه حفصة وكانت ابنة أبيها فقالت : يا نبي الله إنا كنا صائمتين اليوم فعرض لنا طعام اشتهيناه فأكلنا منه فقال : ( اقضيا يوما آخر ) قال حسين سليم أسد : إسناده صحيح (مسند ابو یعلیؒ) ورواہ عبدالرزاق فی المصنف، برقم7793، البیہقیؒ فی معرفۃ السنن الآثار،برقم2560۔

ترجمہ۔ (عائشہ) رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روایت ہے، کہاکہ ،”میں اور حفصہ (رضی اللہ تعالی ٰ عنہا) دونوں (نفلی) روزہ سے تھیں ، کہ ہمیں کھانا پیش کیا گیا،ہمارا جی چاہاکہ کھالیں اس سے، توکھالیا ہم نے کچھ اس میں سے ، پس تشریف لائے رسول اللہ ﷺ تو حفصہ (رضی اللہ تعالیٰ عنہا) آپ سے پوچھنے میں مجھ سے سبقت لے گئیں ، کیوں کہ وہ تو اپنے باپ (عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ)کی بیٹی تھیں (انہی کی طرح دین کی جستجوپہل کرتی تھیں) ، پس عرض کی یارسو ل اللہ () ہم دونوں روزے سے تھیں ،تو ہمیں کھاناپیش کیا گیا، ہمیں بھوک محسوس ہوئی تو ہم نے اس میں سے کھالیا،(اب ہم کیا کریں )؟۔” تو ارشاد فرمایا (رسول اللہ ﷺ نے)،” پس تم دونوں قضاءرکھ لو (اس روزہ کی) کسی اور دن (بعد میں )”۔کہاحسین سلیم اسد نے، اسناد اس (حدیث) کی صحیح ہے۔(مسند ابویعلی ؒ) اور روایت کی ہے عبد الرزاق ؒنے مصنف میں ، نمبر 7793،اور البیہقی ؒ نے معرفۃ السنن والاثارمیں ،نمبر 2560۔


4th Hadith in English, Urdu & Arabic


9186. Anas Ibn e Sirin (be blessed) narrates that, “Certainly, he intended to fast on the day of Arfa (Ninth of Zilhaj). He became too thirsty to die. So he ceased his fast (before sunset). He asked from several companions of Holy Prophet ﷺ about it (compensation)? They All gave verdict, “compensation of one day substitute to that (ceased fast).” (The Musannaf of Ibn Abi Shaybah) and this chain of narrators is correct as per both Sheikhs (Bukhari and Muslim) except (a narrator) Albatty, so four scholars (Tirmizi, Nissay, Ibn e Majah and Abu Dawood) has narrated from him and Ibn e Saad and Ibn e Sufyan and Addar Qutny validated him reliable (Aljohar un Naki 4/277, by Aladdin Ali bin Usman famous as Ibn al Turkumani 745 H) It is narrated from Ahmad bin Hanbal, “he is righteous and reliable” and from Yahya bin Moin, “reliable” (Almuzy , Tehzeeb ul Kamal) and Ibn e Haban described him in reliable. (Alhafiz Ibn e Hajar, Tehzeeb ul Tehzeeb 7/154)

عَنْ أَنَسِ بْنِ سِيرِينَ ؛ أَنَّهُ صَامَ يَوْمَ عَرَفَةَ فَعَطِشَ عَطَشًا شَدِيدًا فَأَفْطَرَ ، فَسَأَلَ عِدَّةً مِنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم ؟ فَأَمَرُوهُ أَنْ يَقْضِيَ يَوْمًا مَكَانَهُ. (مصنف ابن ابی شیبہؒ ) وهذا سند على شرط الشيخين ما خلا البَتِّي فانه أخرج له اصحاب الاربعة ووثقه ابن سعد وابن سفيان والدار قطني (الجوهر النقي 4/277 – علاء الدين علي بن عثمان المارديني الشهير بابن التركمانيؒ، 745ھ) عن أحمد بن حنبلؒ: صدوق ثقة، عن يحيى بن معينؒ : ثقة(المزیؒ، تہذیب الکمال) و ذكره ابن حبانؒ فى ” الثقات(الحافظؒ، تهذيب التهذيب 7 / 154)۔

ترجمہ۔  انس ابن سیرین ؒ سے روایت ہے، کہاکہ، بے شک اس نے روزہ رکھ لیا یوم عرفہ (نو ذوالحجہ ) کا ، تو اس کو پیاس لگ گئی ،نہایت شدید پیاس ، پس اس نے افطارکرلی، پھر پوچھا اس نے کئی اصحاب النبی ﷺ سے ؟ تو سب نے اس کوقضاء رکھنے کا حکم دیا ، ایک دن کا اس (نفلی روزہ )کی جگہ ۔ (مصنف ، ابن ابی شیبہ ؒ) اور یہ سند الشیخین (بخاری ؒ ومسلم ؒ ) کی شرط پر ہے، سوائے (عثمان بن مسلم ) البتی کے ، پس بے شک ا س سے روایت کی ہے چاروں اصحاب (أبو داودؒ، الترمذیؒ، النسائیؒ، ابن ماجه ؒ) نےاور ثقہ کہا ہے اس کو ابن سعدؒ اور ابن سفیان ؒاور الدار قطنی ؒنے ، (الجوہر النقی 4/277، علاء الدین علی بن عثمان الماردینی ؒ، جو کہ مشور ہیں ابن ترکمانی ؒکے نام سے، 745ھ) احمد بن حنبل ؒ نےکہا صدوق ثقہ ہے ، یحی بن معینؒ نے کہا ، ثقہ ہے، (المزی ؒ ، تہذیب الکمال ) اور ابن حبان ؒ نے اس کو ذکر کیاہےثقا ت میں ، (الحافظ ؒ یعنی ابن حجرؒ ، تہذیب التہذیب 7/154


5th Hadith in English, Urdu & Arabic


9187. Atta narrates from Ibn e Abbas (Razi Allah o anho) that he said, “(Who ceases an auxiliary fast before sunset) Compensation of one day substitute to that (ceased fast).” (The Musannaf of Ibn Abi Shaybah)

عَنْ عَطَاءٍ ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ، قَالَ : يَقْضِي يَوْمًا مَكَانَهُ.۔ (مصنف، ابن ابی شیبہؒ) وهذا سند صحيح (الجوهر النقي – المارديني 4/277)۔

ترجمہ۔  ابن عباس ( رضی اللہ تعالیٰ عنہما) سےروایت ہے ، کہا کہ (نفلی روزہ توڑنے پر) قضاء رکھے ایک دن (کا روزہ ) اس کی جگہ ۔ (مصنف ابن ابی شیبہ ؒ) اور یہ سند صحیح ہے۔ (الجوہر النقی ، الماردینی ؒ 4/277 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *