Invalidation of Reciting behind Imam

ترك القراءة خلف الإمام فيما جهر به

Invalidation of Reciting behind Imam

صحابہ حضورﷺ کے منع کرنے پر امام کے پیچھے قراء ت کرنےسے رک گئے


Hadith in English, Urdu & Arabic


Chapter 28 – Hadith No 919: Abu Hurairah (Razi Allaho Anho) narrates that Holy Prophet ﷺ turned towards back after a loudly (Quran recited) performed salat and asked, “If anyone has recited (Quran following) out of you with me now?” A (unknown) man said, yes, ‘O’ Rasoolullah (). He said, “Certainly, I say (was thinking), what happened to me (used for annoying) that Quran was being grabbed by me? (Abu Hurairah Razi Allaho Anho said) After listening this, people (sahabah) discontinued reciting in loudly recited salat. Sheikh Albany said, correct. (A-Nasa’i) and Tirmizi No 312, Sheikh Albani said, correct and Abu Dawood No 826, Sheikh Albani said, correct. And Musnad Ahmad bin Hambal No 7806, 7820, Opinion of Shoaib Alurnwoot is that chain of (of both) are correct and men (narrators) are of both Sheikhs (Sahih Bukhari and Sahih Muslim).

ترك القراءة خلف الإمام فيما جهر به.جہری  نمازوں میں اما م کے پیچھے قراءت کاترک ہوجانا

أخبرنا قتيبة عن مالك عن بن شهاب عن بن أكيمة الليثي عن أبي هريرة : أن رسول الله صلى الله عليه و سلم انصرف من صلاة جهر فيها بالقراءة فقال هل قرأ معي أحد منكم آنفا قال رجل نعم يا رسول الله قال إني أقول ما لي أنازع القرآن قال فانتهى الناس عن القراءة فيما جهر فيه رسول الله صلى الله عليه و سلم بالقراءة من الصلاة حين سمعوا ذلك۔ قال الشيخ الألباني: صحيح (نسائیؒ، ورواہ ترمذیؒ برقم 312،قال الشيخ الألباني : صحيح ، ورواہ ابوداؤد برقم 826،قال الشيخ الألباني : صحيح، ورواہ احمدبن حنبلؒ، برقم 7820،7806 ، (وفیہما) تعليق شعيب الأرنؤوط : إسناده صحيح رجاله ثقات رجال الشيخين)

ترجمہ۔ ابوہریرۃ (رضی اللہ تعالیٰ عنہ )سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ جہری نماز کے بعد رخ انور پھیراتو فرمایا کیا ابھی میرے ساتھ تم میں سے کسی نے قراءۃ کی ہے؟ایک شخص (غیرمعروف)نے عرض کی جی ہاں یا رسول اللہ () فرمایا میں کہتا ہوں مجھے کیاہوا کہ قرآن مجھ سے چھینا جارہاہے؟ (گویا ناراضی کا اظہار فرمایا،) کہا (ابوہریرۃ رضی اللہ تعالیٰ عنہ )پس رک گئے لوگ قراءۃ کرنے سے جہر فرماتے رسول اللہ ﷺ جن نمازوں کی قراءۃ میں ، وہ (حضور ؑ کی ناراضی والی )بات سنتے ہی ۔شیخ البانی نے کہا (یہ حدیث )صحیح ہے۔(نسائیؒ ، اور روایت کی ہے ترمذی ؒ نے نمبر 312 پر الشیخ البانی نے کہا صحیح،اور ابوداؤد نے نمبر 826 الشیخ البانی نے کہا صحیح اوراحمدبن حنبل ؒ نے 7806اور7820 پر تعلیق شعیب الارنؤوط کی کہ اسناد اس کی صحیح ہیں اور رجال ان (دو نوں ) کے صحیح ہیں شیخین (بخاریؒ اور مسلم ؒ ) کی شرط پر

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *