Is Divorce Valid During Menstruation in Islam

هل يصح الطلاق في الحيض

Is Divorce Valid During Menstruation in Islam

کیا اسلام میں حیض کے دوران طلاق جائز ہے؟

( Kiya Islam main Hayiz Ke Douran Talaq Jaiz Hai )

Divorce given to a menstruation woman will be counted حائضہ کو دی جانے والی طلاق گنی جائے گی إِذَا طُلِّقَتْ الْحَائِضُ تَعْتَدُّ بِذَلِكَ الطَّلَاقِ
Divorced in menstruation be reconnected حائضہ کو طلاق دینے کے بعد رجوع کا حکم الأمر بِمُرَاجَعَةِ الْحَائِضِ بعدالطلاق

Is Divorce Valid During Menstruation in Islam

Hadith on Divorce (Talaq) of Allah Translation in English, Arabic & Urdu


Hadith No 4917:- Younas bin Jubair narrated me hadith that, “I asked from Ibn e Umar (Razi Allah o anho), He said, “Ibn e Umar (Razi Allah o anho) has divorced his wife while she was maturating. So, Umar (Razi Allah o anho) asked from Apostle ﷺ, so, he ordered him to reconnect with her, then he may divorce her at the right time (after next menstruation before sexual conduct), I asked, “will this divorce be counted?” He said, did you see who behave like a helpless and foolish. (means will be counted). Narrated Bukhari at no 4917, 4854 and Muslim 2683, 2684 and Tirmizi at no 1175 and Nissay at no 3399, 3400, 3555 and Abu Dawood at no 2184 and about narrations of Scholars of Sunan Sheikh Albani said, “Correct”, and Ahmad bin Hanbal at no 5025, 5504 Taleek of Shoaib Alurnwoot is, “Chain of narrators is correct as per criteria of both Sheikhs (Bukhari and Muslim).

حَدَّثَنِي يُونُسُ بْنُ جُبَيْرٍ سَأَلْتُ ابْنَ عُمَرَ “فَقَالَ طَلَّقَ ابْنُ عُمَرَ امْرَأَتَهُ وَهِيَ حَائِضٌ فَسَأَلَ عُمَرُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَأَمَرَهُ أَنْ يُرَاجِعَهَا ثُمَّ يُطَلِّقَ مِنْ قُبُلِ عِدَّتِهَا قُلْتُ فَتَعْتَدُّ بِتِلْكَ التَّطْلِيقَةِ قَالَ أَرَأَيْتَ إِنْ عَجَزَ وَاسْتَحْمَقَ، “رواہ البخاریؒ برقم 4917، 4854 والمسلمؒ برقم 2683، 2684 والترمذیؒ برقم 1175 والنسائیؒ برقم 3399، 3400، 3555 وابوداودؒ برقم 2184 وفی روایات اصحاب السنن قال الشيخ الألباني : صحيح واحمدبن حنبلؒ برقم 5025، 5504 تعليق شعيب الأرنؤوط : إسناده صحيح على شرط الشيخين ۔

ترجمہ ۔4917 – مجھ سے یونس بن جبیر نے حدیث بیان کی کہ “میں نے پوچھا ابن عمر (رضی اللہ عنہ) سے تو کہا طلاق دے دی ابن عمر (رضی اللہ عنہ) نے اپنی بیوی کو اور وہ حائضہ تھی، تو پوچھا عمر (رضی اللہ عنہ) نے نبی ﷺ سے تو آپ نے ان کو حکم فرمایا کہ وہ رجوع کرے (رجوع کاحکم بتاتاہے کہ ایک طلاق ہو گئی) اس عورت سے، پھر طلاق دے صحیح وقت آنے پر(اگلے طہر میں صحبت سے پہلے)، میں نے عرض کی تو کیا شمار ہو گی یہ طلاق بھی، فرمایا کیا تم نے دیکھا کہ اگر کوئی خود بے بسی اور حماقت (کا اظہار) کرے دے(یعنی شمار ہوگی)؟ “۔ روایت کی ہے بخاریؒ نے نمبر 4917، 4854 پراورمسلمؒ نے نمبر 2683، 2684 پر اور ترمذیؒ نے نمبر 1175 پر اور نسائیؒ نے نمبر 3399، 3400، 3555 پراورابوداودؒ نے نمبر 2184 پر اصحاب سنن کی روایات کے بارے کہا شیخ البانیؒ نے کہ صحیح ہے اوراحمدبن حنبلؒ نے نمبر 5025، 5504 پر تعلیق شعیب الارنؤوط کی ہے کہ اسناد اس کی صحیح ہے شرط شیخین پر۔ 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *