Prophet ﷺ was Awarded Treasures of the Earth

قول رسول اللہ ﷺ اوتیت خزائن الاض

Prophet ﷺ was Awarded Treasures of the Earth

رسول اللہﷺ کو روئے زمین کےخزاے اور دوسونے کے کنگن عطاءکئے گئے


Hadith about Treasures of the Earth with Translation in English, Urdu & Arabic


Words of Allah the Superlative, (Who is more evil than one who fabricates lies) means, invents and pretends that Allah has made him prophet (or says, “I have received divine inspiration,” when no such inspiration was given to him…Al An’am 93). Qatada said, “(This verse) descended about Musaylimah (who pretended himself a prophet), the biggest liar, Alhanfi (from a tribe Sors of Hanifa). He was also an eloquent speaker and soothsayer. So, he claimed to be a prophet and pretended that Allah was sending him his divine inspiration and sent two ambassadors to Holy Prophet ﷺ. So, Holy Prophet ﷺ asked,” Do you confess that Musaylimah is a prophet?” They answered, “Yes”. He said, “If killing of ambassadors was not unlawful, I have had killed both of you.” (Bukhari) Abu Hurairah narrates that Rasoolullah said, “During my snooze, I was awarded (in dream, for a true prophet, it is a revelation) with the treasures of whole the Earth (the treasures of Iran and Rome were captured in the ages of Abu Bakr and Umar, Allah pleased with them). Two bracelets of gold were kept upon my hands. They both became very heavy, which made me grieved. It was inspired to me that I should blow. I blew towards both bracelets, they went off. I interpreted this dream, two bracelets were two biggest liars (because of a war with them two big treasures were captured). I am in between them, one of them is from Sanaa (Yemen) and other is from Yamamah.(Muslim) He means from Mr of Sanaa was Aswad Ansi and from Yamamah was Musaylimah the biggest liar. (Description Al-Baghvi)

قوله عزوجل: {وَمَنْ أَظْلَمُ مِمَّنِ افْتَرَى} أي: اختلق {عَلَى اللَّهِ كَذِبًا } فزعم أن الله تعالى بعثه نبيا،{أَوْ قَالَ أُوحِيَ إِلَيَّ وَلَمْ يُوحَ إِلَيْهِ شَيْءٌ ۔۔الانعام93} قال قتادة: نزلت في مسيلمة الكذاب الحنفي، وكان يسجع ويتكهن، فادعى النبوة وزعم أن الله أوحى إليه، وكان قد أرسل إلى رسول الله صلى الله عليه وسلم رسولين، فقال النبي صلى الله عليه وسلم لهما: أتشهدان أن مسيلمة نبي؟ قالا نعم، فقال النبي صلى الله عليه وسلم: “لولا أن الرسل لا تقتل لضربت أعناقكما”۔ ۔۔۔أخبرنا۔۔۔۔أنا أبو هريرة قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: “بينا أنا نائم إذ أُتِيْتُ خزائن الأرض فوضع في يدي سواران من ذهب،فكبُراعلي وأهمّاني فأوحي إلي أن انفخهما، فنفختهما فذهبا، فأولتهما الكذابَيْن اللذين أنا بينهما: صاحب صنعاء وصاحب اليمامة” ۔أراد بصاحب صنعاء الأسود العنسي وبصاحب اليمامة مسيلمة الكذاب ۔(تفسیر البغویؒ

ترجمہ۔ قول اس (اللہ تعالیٰ)عزوجل کا{اورکون ہے اس سےبڑھ کرظالم جو اللہ تعالیٰ پر بہتان باندھتا ہے}یعنی، گھڑا{اوپر اللہ تعالیٰ کے جھوٹ}پس گمان کیا تحقیق اللہ تعالیٰ نے بھیجا ہے اسے نبی بنا کر{یا کہا وحی کی گئی میری طرف اور نہیں وحی کی گئی اس کی طر ف کوئی شیء۔۔۔الانعام آیت نمبر93}کہا قتادہؒ نے، نازل ہوئی (یہ آیت) بابت مسیلمہ کذاب الحنفی (یہ شخص قبیلہ بنو حنیفہ سے تھا)کے ، اور وہ مسجع کلام (خوب لفاظی) اور کہانت (غیب گوئی ) کرتا، پس دعویٰ کردیا نبوت کا اور یہ گمان کیا کہ یقیناً اللہ تعالیٰ وحی بھیجتا ہے اس کی طرف ، اور بھیجے رسو ل اللہ ﷺ کی طرف دو قاصد ، پس فرمایا نبی ﷺ نے ان دونو ں کو ، “کیا گواہی دیتے ہو تم دونوں کہ مسیلمہ نبی ہے ؟” کہا دونوں نے ہاں، پس فرمایا رسول اللہ ﷺ نے ، “اگریہ ( رواج میں ) نہ ہوتا کہ قاصدوں کو قتل نہیں کیا جاتا تو ضرور میں ماردیتا گردنیں تم دونوں کی”۔(بخاریؒ)حضرت ابوہریرۃ( رضی اللہ تعالیٰ عنہ)سے روایت ہے کہا کہ فرمایا رسول اللہ ﷺ نے ،”اس دوران کہ میں سو رہا تھا کہ جب (خواب میں) دئے گئے مجھ کو خزانے روئے زمین کے(قیصروکسری کے خزانے جوفتح ہوئےحضرت ابوبکررضی اللہ تعالیٰ عنہ اورحضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے زمانہ میں ) ،پس رکھ دئے گئے میرے ہاتھوں میں دو کنگن سونے کے، تو وہ بھاری لگے دونوں مجھے ، اور غمگین بھی کیا مجھے دونوں نے ،پس وحی کی گئی میری طرف کہ پھونک ماروں میں دونوں کو پس میں نے پھونک ماری دونوں کو تو وہ دونوں چلے(اُڑ) گئے ، تو میں نے تعبیر لی دونو ں کی کہ کذابین ہیں وہ جن دونوں کے درمیان میں (محمد ﷺ) ہوں، صاحب صنعاء (صنعاء یعنی یمن کارہنے والا)اور صاحب یمامہ (یمامہ کارہنے والا)”۔ (مسلمؒ ) ارادہ فرمایاصاحب صنعاء سے اسود عنسی اور صاحب یمامہ سے مسیلمہ کذاب۔ (ساری عبارت تفسیر البغویؒ سے منقول ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *