Requesting Near Grave of Holy Prophet (PBUH) to Pray for Water | Al-Bidaya Wa’l-Nihaya

قول الرجل علی قبر رسول اللہ ﷺ، استسق اللہ لامتک

صحابی کا روضہ اقدس پر بارش مانگنے کے لئے درخواست کرنا

Requesting near Grave of Holy Prophet (PBUH) to Pray for water


1st Hadith in Arabic


وقال الحافظ أبوبكرالبيهقي ۔۔۔عن مالك قال: أصاب الناس قحط في زمن عمربن الخطاب فجاء رجل إلى قبرالنبي صلى الله عليه وسلم فقال:يارسول الله استسق الله لامتك فإنهم قد هلكوا.فأتاه رسول الله صلى الله عليه وسلم في المنام فقال: إيت عمر فأقره مني السلام واخبرهم أنهم مسقون، وقل له عليك بالكيس الكيس.فأتى الرجل فأخبرعمر فقال:يارب ما آلوا إلا ما عجزت عنه وهذا إسناد صحيح


2nd Hadith in Arabic


حتى أقبل بلال بن الحارث المزني فاستأذن على عمر فقال: أنا رسول رسول الله إليك، يقول لك رسول الله صلى الله عليه وسلم ۔۔۔۔۔۔۔فخرج فنادى في الناس الصلاة جامعة، فصلى بهم ركعتين ؟ فقالوا: اللهم لا، فقال: إن بلال بن الحارث يزعم ذية وذية.قالوا: صدق بلال فاستغث بالله


1st Urdu Translation


حضر ت مالک الدار( رضی اللہ تعالیٰ عنہ )سے روایت ہے ,کہاکہ ، لوگ قحط میں مبتلا ہوگئے حضر ت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے زمانہ میں ، پس ایک شخص آیا قبر النبی کی طرف تو عرض کی یا رسو ل اللہ ( ) اپنی امت کے لیے پانی (بارش) طلب کیجئےاللہ تعالیٰ سےیقینا وہ ہلاک ہو گئے، پس آگئے رسو ل اللہ اس کوخواب میں ، تو فرمایا ، عمر کے پاس جاؤ ، پس میر ا اسے سلام کہو اور انہیں خبر دو کہ ان کے لیے بارش ہوگی، اور کہو اس سےکہ قائم رہے دانائی پر ۔پس آیا وہ شخص ،پس خبر دی عمر (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) کو ، پس کہا عمر (رضی اللہ تعالیٰ عنہ ) نے اے رب میں نے کوتاہی نہیں کی سوائے اس کے کہ میں عاجز آگیااس سے۔اور یہ اسناد صحیح ہیں  البدایہ والنہایہ ج7ص91


2nd Urdu Translation


یہاں تک کہ بلال المزنی آئےعمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کےپاس پس ، کہا ، میں رسول اللہ ﷺ کا رسول (بھیجا ہوا ) ہوں تمھاری طرف۔۔۔پس نکلے( عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ) پس آواز لگائی لوگوں میں “الصلاۃ الجامع” (ان الفاظ کےساتھ لوگوں کو جمع کیا جاتاتھا اہم امور میں مشورہ لینے کےلیے) پس لوگوں کے ساتھ دورکعتیں پڑھیں ۔۔۔، پس کہا بے شک بلال بن حارث(رضی اللہ تعالیٰ عنہ) ایسے ایسے کہتے ہیں ، کہا سب نے سچ کہا بلال (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) نے پس اللہ تعالی ٰسے مانگیے۔۔ الطبري4 ص98،الکامل لابن الاثیر ج 2 ص556، البدایہ والنہایہ ج7ص91


First English Translation


Malik-ul-dar (Razi Allahu Anhu) narrates that, “People of (Hejaz) were suffering from starvation (due to shortage of water) in the age of Umar (Razi Allahu anhu), so, a person came to grave of the Prophet ﷺ and said, O Rasoolullah ﷺ please, you should pray for the water from Allah for your followers, they are going to be destroyed. Then he saw a dream about Prophet ﷺ in that he said, “Go towards Umar (Razi Allahu anhu) and convey him my greetings to him and inform him about the coming rains, and he should keep practicing the wisdom.” So, he came to Umar (Razi Allahu anhu) and informed him. So Umar (Razi Allahu anhu) said, “O Allah I did not practice erroneously except i was powerless to manage. Asnad (the chain of narrators) of this (hadith) are correct. ( Al-Bidaya wa’l-Nihaya, Part 7, Page 91)


Second English Translation


Until Bilal Al Muzny came to Umar (Razi Allahu anhu) and said, “I am the messenger of Rasoolullah ﷺ to you”…so they came out and called the people with a maxim “As-Salat Al-Jama’ah” (with this slogan people were made gathered for consultation to get their recommendation), hence they offered two rakat Salat (prayer)…. and said, “O people, no doubt , he is Bilal bin Haris, told me about such thing (dream in which he saw Holy Prophet PBUH)”. Everybody said, “Bilal narrated the reality, now, let us offer prayer to beg (water from Allah).” (Al-Bidaya wa’l-Nihaya, Part 7, Page 91, Al-Kamil Ibn Aseer, part 2 Page 556, Altibry Part 4 Page 98)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *