Sperm is Contamination

Seminal Material (Sperm) is contamination

المنی نجس

منی نجس ہے

And they ask you about menstruation. Say, it is a pollution (Al Baqarah, 222) اورآپ سے سوال کرتے ہیں حیض کے بارے ، کہہ دیں وہ گندگی ہے  (البقرۃ 222 وَيَسْأَلُونَكَ عَنِ الْمَحِيضِ قُلْ هُوَ أَذًى (البقرۃ 222)۔ 1
And Alaza is an allusion for pollution (Alkurtaby, 3/85) اورالاذی کنایہ ہے گندگی کے لئے  (القرطبیؒ 3/85)۔ والأذى كناية عن القذر (القرطبیؒ 3/85)۔ 2
His wording Aza, Attayyaby said, menstruation was named “Aza” for its bad smell, and for pollution and for its contamination. (Fath al Bari, 1/399 اس (اللہ) کا قول اذی، کہا الطیبیؒ نے نام رکھا گیا ہے حیض کا “آذی” اس کی بدبو کی وجہ سے اور گندگی کی وجہ سے اور اس کی نجاست کی وجہ سے ۔(فتح الباری، 7/399)۔ قوله أذى قال الطيبي سمى الحيض أذى لنتنه وقذره ونجاسته  (فتح الباری 1/399)۔ 3
And “Alaza” means contamination (Umdat ul Qari, 5/68) اورالأذى سے مراد نجاست ہے  (عمدۃ القاری 5/68)۔  والمراد من الأذى النجاسة (عمدۃ القاری 5/68)۔ 4
Hadith no 241. Memoonah (Radi Allah o anha) wife of Holy Prophet narrates that, “Rasoolullah ﷺ performed ablution like his ablution of salah but only left his feet, then he washed his private organs and (washed) contamination contacted (sperms etc) him, then he dispensed water upon him, and displaced his feet from the bathing area and washed his feet. It was bath of Janabat”. (Al-Bukhari narrated, and at no 251، 252, 257, 258 with text, “So he washed his private parts and rubbed his hand on soil or wall”   272، 267 and Tirmizi, at no 103 abd Anisay at no 428 and Abu Dawood at no 245 and about all three, Sheikh Albani said, “Correct”, and Ahmad bin Hanbal at no 26899 , 26866 and about both Taleek of Shoaib Alurnwoot is, “Chain of narrators is correct as per criteria of both Sheikhs (Bukhary and Muslim).”   میمونۃ (رضی اللہ تعالیٰ عنہا) زوجہ نبی ﷺ سے روایت ہے کہا کہ، “رسول اللہ ﷺ نے وضوء فرمایا اپنے نماز کے وضوء کی طرح بغیر اپنے دونوں (مبارک) پاؤں (دھونے)  کے، اوراپنی شرم گاہ کو دھویا اورجو لگ گئی تھی  الأذى (نجاست منی وغیرہ) انہیں (وہ بھی دھولی)،  پھر بہایا اپنے اوپر پانی پھر اس جگہ سے ہٹ کر اپنے دونوں (مبارک پاؤں) دھو دئیے، یہ تھا غسل جنابت” (روایت کی ہے البخاریؒ نے، اور نمبر ، 251،252، 257 ،258 ان الفاظ سے “پس آپ نے اپنی شرم گاہ کو دھولیا پھر ہاتھ کو زمیین سے رگڑلیا یا دیوار سے” اورنمبر 267، 272 پر اورالترمذیؒ نے نمبر 103 پراور النسائیؒ نے نمبر 428 پر اورابوداودؒ نے 245 پراورتینوں کے بارے کہا الشیخ البانیؒ نے صحیح ہے اوراحمد بن حنبلؒ نے نمبر 26899، 26866 پر اوردونوں کے بارے تعليق شعيب الأرنؤوط کی ہے کہ اسناداس کی صحیح ہے  شرط الشيخين (بخاریؒ اورمسلمؒ) پر)  عن ميمونة زوج النبي صلى الله عليه وسلم قالت  توضأ رسول الله صلى الله عليه وسلم وضوءه للصلاة غير رجليه وغسل فرجه وما أصابه من الأذى (ای المنی وغیرہا) ثم أفاض عليه الماء ثم نحى رجليه فغسلهما هذه غسله من الجنابة (رواہ البخاریؒ وبرقم 251،252 ، 257 ،258  بلفظ”فغسل فرجه ثم دلك يده بالأرض أو بالحائط” ،وبرقم 267، 272 والترمذیؒ برقم 103 والنسائیؒ برقم 428،وابوداودؒ برقم 245 وفی الثلاثۃ قال الشیخ البانیؒ صحیح، واحمد بن حنبلؒ برقم 26899، 26866 وفی کلیہما تعليق شعيب الأرنؤوط : إسناده صحيح على شرط الشيخين)  5
Hadith No 540: It is narrated from Muawiyah bin Sufyan (Razi Allah o anho) asked from his sister Umm Habiba (Raziallaho anho) the wife of Rasoolullah, ﷺ, “Has he (Rasoolullah, ﷺ ) been offering  salat in the same clothing, in which he used to copulate with his wives?. She answered, “Yes, when it (clothing) was not bearing contamination (seminal material).” (Explanation , “when it was not bearing contamination” means seminal material) .Narrated Ibn e Majah and Abu Dawood at no 366 and Annisay at no 294 and about all Sheikh Albny said, “Correct”, and Ahmad bin Hanbal at no 26803 with text, “Did Rasoolullah ﷺ offer salah in same clothing in which he used to sleep with you? She answered, “Yes, when it (clothing) was not contaminated. (with seminal material)”  and Taleek of Shoaib Alurnwoot is, “Hadith is correct” and at no 2744 and Taleek of Shoaib Alurnwoot is, “Chain of narrators is correct”, and Abu Yaala at no 7126 and Hussanin Salim Asad said, “Chain of narraotrs is correct”. معاویۃ بن سفیان (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) سے روایت ہےکہ بے شک انہوں نے سوال کیا اپنی بہن ام حبیبۃ (رضی اللہ تعالیٰ عنہا) روجہ نبی ﷺ سے کہ “کیا رسول اللہ ﷺ نمازپڑھتے تھے اس کپڑے میں جس میں وہ (اپنی ازواج کے ساتھ) ہم بستری فرماتے تھے؟ کہا ہاں ، جب اس میں کوئی  أذى  (ناپاکی) نہ لگی ہوتی تو (اس میں نماز ادا فرمالیتے)”۔ (شرح ، جب اس (کپڑے) میں (آذی) ناپاکی نہ ہوتی یعنی منی کا اثر نہ ہوتا)روایت کی ہے ابن ماجہؒ نے اورابوداودؒ نے نمبر 366پر اور النسائی نے نمبر 294 پر اور سب کے بارے میں کہا الشیخ البانیؒ نے کہ صحیح ہے اوراحمدبن حنبلؒ نے نمبر 26803، پر ان الفاظ سے، “کیا رسول اللہ ﷺ نمازادافرماتے اسی کپڑے میں جس میں وہ آپ کی ساتھ سوجاتے تھے؟ کہاہاں، جب اس میں  أذى ( ناپاکی) نہ لگی ہوتی۔”۔اور تعليق شعيب الأرنؤوط کی ہے کہ  حديث صحيح ہے اورنمبر  27444 اور تعليق شعيب الأرنؤوط کی ہے إسناداس کی  صحيح ہے اور ابویعلیؒ نے نمبر 7126 پر اور کہا حسين سليم أسد نے إسناداس کی  صحيح ہے۔ عن معاوية بن أبي سفيان أنه سأل أخته أم حبيبة زوج النبي صلى الله عليه و سلم۔ : – هل كان رسول الله صلى الله عليه و سلم يصلي في الثوب الذي يجامع فيه ؟ قالت نعم . إذا لم يكن فيه أذى
 [ ش ( إذا لم يكن فيه أذى ) أي أثر المني ] . ۔ رواہ ابن ماجہؒ وابوداودؒ برقم 366، والنسائیؒ برقم 294،وفی الثلاثۃ قال الشيخ الألباني : صحيح واحمدبن حنبلؒ برقم 26803،بلفظ أكان رسول الله صلى الله عليه و سلم يصلي في الثوب الذي ينام معك فيه قالت نعم ما لم ير فيه أذى و تعليق شعيب الأرنؤوط : حديث صحيح وبرقم 27444 و تعليق شعيب الأرنؤوط :  إسناده صحيح وابویعلیؒ برقم 7126 و قال حسين سليم أسد : إسناده صحيح
6
Aysha (Radi Allah o anha) narrates that, “I used to scrap the sperms from the garments of Rasoolullah ﷺ in case of dried sperms….sperms are it self contamination as narrated about shoes contaminated….Abu Hurairah (Radi Allah o anho) narrates that Rasoolullah ﷺ said, “When chaps (legging) or shoes are contaminated, can be purified by (rubbing with) soil” this (action of rubbing with) soil will be sufficient for purification than washing. This is not an argument that contamination is purified itself. In the same way scrapping of (dry) sperms from garments purifies it and sperms itself are a contamination. (Sharh al Bukhary , Ibn e Batal) عائشۃ (رضی اللہ عنہا) سے روایت ہے، کہا کہ ،”میں کھرچ دیا کرتی منی رسول اللہ ﷺ کے کپڑوں سے جبکہ وہ خشک ہوتی اور دھویا کرتی جب وہ تر (گیلی) ہوتی۔۔۔اور منی بذات خود نجس ہے جیسا کہ روایت میں آیا جوتے کو ناپاکی لگ جانے کے بارے میں۔۔۔۔ابو ہریرۃ (رضی اللہ عنہ) سے روایت ہے کہ… جب تم میں سے کسی کے (چمڑے  کے ) موزوں کوناپاکی لگ جائے , یااس کے جوتوں کولگ جائے تو ان کو مٹی سے (رگڑکر) پاک کیا جاسکتا ہے ،تو یہ مٹی اس کے دھونے کی بجائے استعمال کرنا جائز ہے اور یہ اس بات کی دلیل نہیں ہے کہ وہ ناپاک چیزخود پاک ہے ، اسی طرح منی کپڑے پر سے کھرچنے سے (اثرجاتا رہے توکپڑا) پاک ہوجاتاہے، اور منی بذات خود نجس ہے (شرح البخاری، ابن بطالؒ)۔  عن عائشة، قالت: كنت أفرك المنى من ثوب رسول الله – صلى الله عليه وسلم – إذا كان يابسًا، وأغسله إذا كان رطبًا.۔۔۔ والمنى فى نفسه نجس كما روى فيما أصاب النعلين من الأذى۔۔۔۔عن ابى هريرة، قال: قال رسول الله – صلى الله عليه وسلم -:… إذا وطئ أحدكم الأذى بخفيه، أو بنعليه، فطهورهما التراب – .
فكان ذلك التراب يجزئ من غسلهما وليس ذلك دليل على طهارة الأذى فى نفسه، فكذلك المنى يطهر الثوب بالفرك، والمنى فى نفسه نجس. (شرح البخاریؒ، ابن بطالؒ)۔
7
Hadith no 386: Abu Hurairah (Radi Allah o anho) narrates from Holy Prophet ﷺ that he said, ” when your chaps (legging) are contaminated, then its purification is (to rub it) with soil (so that it is remove)”. Sheikh Albany said, “Correct”. (Abu Dawood) and Ibn e Habban at no 1404 and Shoaib Alurnwoot said, “Chain of narrator of this hadith is correct”. ابوہریرۃ(رضی اللہ عنہ) نبی ﷺ سے روایت کرتے ہیں، ارشاد فرمایاکہ، ” جب نجاست لگ جائے موزوں کو تو ان کا پاک کرنا مٹی  سے( رگڑنا)ہے (جب کہ نجاست کا اثر باقی نہ رہے)” . کہا الشیخ البانیؒ نے کہ صحیح ہے (ابوداودؒ) اورابن حبانؒ نے نمبر1404 پر کہا شعیب الارنؤوط نے کہ حدیث صحیح ہے۔ عن أبي هريرة عن النبي صلى الله عليه و سلم بمعناه قال : ” إذا وطىء الأذى بخفيه فطهورهما التراب ” . قال الشيخ الألباني : صحيح (ابوداودؒ) وابن حبانؒ برقم 1404 قال شعيب الأرنؤوط : حديث صحيح ۔ 8

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *