Timings of Five Prayers

مواقیت صلاۃ الخمسۃ

Timings of Five Prayers

پانچ نمازوں کے اوقات

(Panch Namazoun Ke Aukaat)


Hadith about Timing of Prayers (Salah) with Translation in English, Urdu & Arabic


Hadith No 729:- Abu Barzah Alaslamy (Radi Allah o anho) narrates that, “Apostle ﷺ used to offer his prayer of dhuhr, when the Sun declined and Asr, so, that a man returned back to the last corner of Madinah (city). And I do not remember about Maghrib. And he did not find any loss in delaying the Isha prayer upto the one third of night, and did not like sleeping before it (Isha) and chatting after it. And he used to offer the Fajr prayer, that at the end a man could recognize the face of near by sitting person and used to recite in between sixty to hundred verses in both or single Rakat (of salat). Narrated Al-Bukhari at no 508, 514, 564, 729 and Al-Nissay at no 495, 525, 530 and Abu Dawood at no 398 and about narrations of both Sheikh Albany said, “Correct”, and Ahmad bin Hanbal at no 19782, 19811, 19824 and about all Taleek of Shoaib Alurnwoot is, “Chain of narrators is correct as per criteria of both Sheikhs (Bukhari and Muslim) and Al-Muslim at no 1024 Abu Yala at no 7425 and Darmy at no 1300 and about the narrations of both Hussain Salim Asad said, “Chain of narrators is correct”.

عَنْ سَيَّارُ بْنُ سَلَامَةَ قَالَ دَخَلْتُ أَنَا وَأَبِي عَلَى أَبِي بَرْزَةَ الْأَسْلَمِيِّ فَسَأَلْنَاهُ عَنْ وَقْتِ الصَّلَوَاتِ فَقَالَ “كَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُصَلِّي الظُّهْرَ حِينَ تَزُولُ الشَّمْسُ وَالْعَصْرَ وَيَرْجِعُ الرَّجُلُ إِلَى أَقْصَى الْمَدِينَةِ وَالشَّمْسُ حَيَّةٌ وَنَسِيتُ مَا قَالَ فِي الْمَغْرِبِ وَلَا يُبَالِي بِتَأْخِيرِ الْعِشَاءِ إِلَى ثُلُثِ اللَّيْلِ وَلَا يُحِبُّ النَّوْمَ قَبْلَهَا وَلَا الْحَدِيثَ بَعْدَهَا وَيُصَلِّي الصُّبْحَ فَيَنْصَرِفُ الرَّجُلُ فَيَعْرِفُ جَلِيسَهُ وَكَانَ يَقْرَأُ فِي الرَّكْعَتَيْنِ أَوْ إِحْدَاهُمَا مَا بَيْنَ السِّتِّينَ إِلَى الْمِائَةِ”، رواہ البخاریؒ برقم 508، 514، 564، 729 والنسائیؒ برقم 495، 525، 530 وابوداودؒ برقم 398 وروایاتہما قال الشیخ البانیؒ صحیح، و احمد بن حنبلؒ برقم 19782، 19811، 19824 و فی کلہن تعلیق شعیب الارنؤوط، اسنادہ صحیح علی شرط الشیخین، والمسلمؒ برقم 1024 و ابویعلیؒ برقم 7425 والدارمیؒ برقم 1300 وفی روایاتہما قال حسین سلیم اسد اسنادہ صحیح،۔

ترجمہ۔729 – ابوبرزۃ الاسلمی (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) سے روایت ہےکہ “نبی ﷺ نماز ظہر ادا فرماتے جب سورج ڈھل جاتا، اور نماز عصر ادا فرماتے کہ جتنا کوئی شخص لوٹ کرجاتا ہے مدینہ کے آخری حصہ تک (مسجد سے) تو سورج میں تیزی ابھی باقی ہوتی اورمیں بھول گیا کہ کیا کہا مغرب کے بارے میں اور کچھ حرج نہ سمجھتے نماز عشاء کی تاخیر میں تہائی رات ہو جانے تک اورنہ پسند فرماتے سونا اس (عشاء کی نماز ) سے پہلے اور بات چیت کرنا اس(عشاء کی نماز ) کے بعد، اور صبح کی نماز ادافرماتے (تو اتنی روشنی ہوجاتی کہ ) کہ نماز کے بعد (آدمی) اپنے ہم جلیس (پاس بیٹھے شخص) کو پہچان لیتا اور تلاوت فرماتے (نمازصبح کی)دو رکعتوں یا ایک میں ساٹھ سے سو آیات کے درمیان” ، روایت کی ہے البخاریؒ نے نمبر 508، 514، 564، 729 پر اور النسائیؒ نے نمبر 495، 525، 530 پر اورابوداودؒ نے نمبر 398 پر اوردونوں کی روایات کے بارے کہا الشیخ البانیؒ نے صحیح ہے اور احمد بن حنبلؒ نے نمبر 19782، 19811، 19824 پر ان سب کے بارے تعلیق شعیب الارنؤوط،کی ہے کہ اسناد اس کی صحیح ہے الشیخین کی شرط پر او رالمسلمؒ نمبر 1024 پر اور ابویعلیؒ نے نمبر 7425 پر اور الدارمیؒ نے نمبر 1300 پر اور دونوں کی روایات کے بارے کہا حسین سلیم اسد نے کہ اسناد اس کی صحیح ہے۔

 

Related Topics:

Timing of Fajr and Asr Prayer

Advantages of Prayer Offered in Time

Virtues of Friday Prayer (Salatul Jumuah)

Etiquettes of Friday Prayer (Salatul Jumuah)

Purification of Clothes is Obligatory for Prayer

Can an Adult Woman Perform Prayer without Covering

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *