Torment of Grave Due To urine

عذاب القبر لہ من لایستتر من بولہِ

Torment of Grave Due To Urine

پیشاب سے نہ بچنے پر عذاب قبر

(Peshab Se Na Bachne Per Azab-e-Qabar)


Torment of Grave 1st HadithTranslation in English, Arabic & Urdu


Hadith No 209:- Ibn e Abbas (Radi Allah o anho) narrated, he said, “Holy Prophet ﷺ passed through one of the gardens of Madinah or Makkah, he listened voices of two humans being tormented in their graves for not a big thing (it could be avoided easily) .” Then he told, “One of them was not used to avoid himself (or his clothing) from urine and the other was used to wander for backbiting.” Narrated it Al-Bukhari, and at no 5592, 1289, 5595, and Al-Muslim at no 429 and Ibn e Haban at no 824, Shoaib Alurnwooth said, “Chain of narrators is correct”. and Annisay at no 2068 and Al-Tirmizi at no 70 and Abu Dawood at no 21 and Ibn e Majah at no 347, 349 through Abu Bakrah Radi Allah o anho Sheikh Albani (about the last four) said, “Correct”.

عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ قَالَ مَرَّ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِحَائِطٍ مِنْ حِيطَانِ الْمَدِينَةِ أَوْ مَكَّةَ فَسَمِعَ صَوْتَ إِنْسَانَيْنِ يُعَذَّبَانِ فِي قُبُورِهِمَا فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُعَذَّبَانِ وَمَا يُعَذَّبَانِ فِي كَبِيرٍ ثُمَّ قَالَ بَلَى كَانَ أَحَدُهُمَا لَا يَسْتَتِرُ مِنْ بَوْلِهِ وَكَانَ الْآخَرُ يَمْشِي بِالنَّمِيمَةِ۔۔۔. رواہ البخاریؒ وبرقم 1289،5592، 559 ،والمسلمؒ برقم 439،وابن حبانؒ برقم 824 قال شعيب الأرنؤوط : إسناده صحيح والنسائیؒ برقم 2068، والترمذیؒ برقم 70 وابوداودؒ برقم 21 وابن ماجہؒ برقم 347 , 349 عن ابوبکرۃ رضی اللہ عنہ (فی ھؤلاءاصحاب الاربعۃ) قال الشيخ الألباني : صحيح ۔

ترجمہ ۔ 209 – حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہےکہاکہ، ” گذر ہوا نبی ﷺ کامدینہ یامکہ کے باغات میں سے ایک باغ سے پس سنی آواز دو انسانوں کی کہ دونوں کو عذاب ہورہاہے ان کی قبروں میں ، تو ارشاد فرمایا نبی ﷺ نے دونوں کو عذاب نہیں دیا جارہا ہےکسی بڑی بات کی وجہ سے (حالانکہ ان سے بچنا آسان تھا) ، پھر ارشادفرمایا ، ہاں دونوں میں سے ایک کو (عذاب ہورہاہے کہ وہ) نہیں بچتا تھا اپنے پیشاب سے اور دوسر ا پھرتا تھا چغلی کے ساتھ (کے لوگوں کی چغلی کرے)”۔۔۔ روایت کی البخاری ؒ نے اورنمبر 1289،5592، 5595،پر اور المسلم ؒنے نمبر 439 پراور ابن حبان ؒ نے نمبر 824پر کہا شعیب الارنؤوط نے کہ اسناد اس کی صحیح ہے، اور النسائی ؒ نے نمبر 2068پر ۔، اور الترمذیؒ نے نمبر 70پر ، اور ابوداودؒ نے نمبر 21پر اور ابن ماجۃ ؒ نے , 349,347 پر ابوبکرۃ رضی اللہ عنہ سے (آخرچاروں اصحاب کے بارے) کہا الشیخ البانی ؒ نے کہ صحیح ہے ۔۔


Torment of Grave 2nd HadithTranslation in English, Arabic & Urdu


Hadith No 8313:- Abu Hurairah (Radi Allahu anhu) narrates from Holy Prophet ﷺ that he said, “Most of the torments of the grave will be due to (not avoiding from) urine”. Narrated Ahmad bin Hanbal and at no 9021, 9047 and (about all) Taleek of Shoaib Alurnwoot is, “Chain of narrators is correct as per the criteria of both Sheikh (Bukhari and Muslim), and Ibn e Majah at no 348 Sheikh Albani (about the last three) said, “Correct”، and Al-Hakim at no 653 and Taleek of Azzahby in Talkhees is, “As per criteria of both (Bukhari and Muslim), and it is flawless, and there is witness (another narration) also for it.”

عن أبي هريرة عن النبي صلى الله عليه و سلم قال : أكثر عذاب القبر في البول . رواہ احمدبن حنبلؒ وبرقم 9021، 9047 (وفی کلہم) تعليق شعيب الأرنؤوط : إسناده صحيح على شرط الشيخين، وابن ماجہؒ برقم 348 قال الشيخ الألباني : صحيح، والحاکمؒ برقم 653 تعليق الذهبي قي التلخيص : على شرطهما ولا أعلم له علة وله شاهد۔

ترجمہ ۔ 8313 – ابوہریرۃ (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) نبی ﷺ سےروایت کرتے ہیں کہ ارشاد فرمایا، “اکثر عذاب قبر پیشاب (سے نہ بچنے ) کی وجہ سے ہوگا۔” روایت کی ہے احمدبن حنبلؒ نے اپنی مسند میں اور نمبر 9021، 9047پر،اور (ان سب کے بار) تعلیق شعیب الارنؤوط کی ہے کہ اسناد اس کی صحیح ہے شیخین (بخاریؒ و مسلمؒ) کی شرط پر اور ابن ماجہؒ نے نمبر 348پر کہا الشیخ البانیؒ نے کہ صحیح ہے۔ اور الحاکمؒ نے نمبر653پر، تعلیق الذہبیؒ کی التلخیص میں ہے کہ دونوں (بخاریؒ ومسلمؒ) کی شرط پر ہے اور میں نہیں جانتا اس (کی سند) میں کوئی نقص اور اس پر گواہ (ایک اورروایت) بھی ہے۔


Torment of Grave 3rd HadithTranslation in English, Arabic & Urdu


Hadith No 102:- Abu Hurairah (Radi Allahu anhu) narrates that, Rasoolullah ﷺ said, “avoid from urine (body or clothing), no-doubt, generally, torments of grave will be due to this.” Narrated Ad Daraqutni, (7/128) and Ibn e Hajar Askalany said, “Correct, and there is a witness (another same narration) for this”. (Buloogh al maraam)

 وَعَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ – رضي الله عنه – قَالَ: قَالَ رَسُولُ اَللَّهِ – صلى الله عليه وسلم – – اِسْتَنْزِهُوا مِنْ اَلْبَوْلِ, فَإِنَّ عَامَّةَ عَذَابِ اَلْقَبْرِ مِنْهُ – رَوَاهُ اَلدَّارَقُطْنِيّؒ (128 /7)-وقال الحافظ ابن حجر العسقلانيؒ ، صحيح. وله ما يشهد له .(بلوغ المرام ،1/32)۔

ترجمہ ۔ 102 – اورابوہریرۃ (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) سے روایت ہے، کہا کہ “ارشاد فرمایا رسول اللہ ﷺ نے ، دور رہو (بچو) پیشاب سے (کہ جسم یا کپڑوں پر لگے) عمومی عذاب قبر اسی (سے نہ بچنے ) کی وجہ سے ہوگا۔” روایت کی ہے الدارقطنیؒ نے (7/128) اور کہا الحافظ ابن حجرالعسقلانیؒ نے کہ صحیح ہے ، اوراس پر گواہ ایک اور روایت موجود ہے۔ (بلوغ المرام 1/32)۔


Torment of Grave 4th HadithTranslation in English, Arabic & Urdu


Hadith No 31:- Abu Hurairah (Radi Allahu anhu) narrates that, Rasoolullah ﷺ said, “Avoid from urine (body or clothing), no-doubt, generally, torments of grave will be due to urine.” (Almajalisato wa Jawahir ul elm, Abu Bakr Ahmad bin Marwan Addenoory Almalky, 333 Hijrah) And comments underneath of Sheikh Mashoor Hassan are, “Correct”.

حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ يَزِيدَ الْوَرَّاقُ ، نَا عَفَّانُ بْنُ مُسْلِمٍ الصَّفَّارُ ، نَا أَبُو عَوَانَةَ ، عَنِ الْأَعْمَشِ ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ؛ قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : « تَنَزَّهُوا مِنَ الْبَوْلِ ؛ فَإِنَّ عَامَّةَ عَذَابِ الْقَبْرِ مِنَ الْبَوْلِ » (المجالسة وجواهر العلم، : أبو بكر أحمد بن مروان الدينوريؒ المالكي 333ھ) وفی الھامش، قال الشيخ مشهورحسن، “صحیح”۔

ترجمہ ۔ 31 – اورابوہریرۃ (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) سے روایت ہے، کہا کہ “ارشاد فرمایا رسول اللہ ﷺ نے ، پاک رہو (بچو) پیشاب سے (کہ جسم یا کپڑوں پر لگے) عمومی عذاب قبر پیشاب (سے نہ بچنے ) کی وجہ سےہی ہوگا۔” (المجالسة وجواهر العلم، : أبو بكر أحمد بن مروان الدينوريؒ المالكي 333ھ) اورحاشیہ میں کہا الشيخ مشهور حسن نے ، کہ صحیح ہے۔


Torment of Grave 5th HadithTranslation in English, Arabic & Urdu


Hadith No 657:- Abdurrahman bin Hasanah (Radi Allah o anho) narrates that, ” I and Amr bin Alaas (Radi Allah o anho) walked (for some thing), then Rasoolullah ﷺ came to us, and he was having a leather buckler or like that some thing in his hands, he made a cover screen of it and urinated in sitting position. I said, “Do you see that Rasoolullah ﷺ is urinating like a woman? He said, “He (Rasoolullah ﷺ) came to us and said, “Do you know the consequent of companion of Son of Israel? When it (urine) contaminated them (their clothing due to their carelessness), it was cut off with scissors, he said, “He has forbidden them from it, and he (companion) was tormented in grave. (due to not avoiding from urine).” Narrated Alhakim in Almustadrik, Taleek of Azzahby in Attalkhees is, “As per the criteria of both (Bukhari and Muslim)”, and Ahmad bin Hanbal at no 17793 and 17795 and about both Taleek of Shoaib Alurnwoot is, “Chain of narrators is correct”, and Abu Ya’la at no 932 and Hussain Salim Asad said, “Chain of narrators is correct”, and Ibn e Haban at no 3127, Shoaib Alurnwoot said, ” “Chain of narrators is correct as per criteria of both Sheikhs (Bukhari and Muslim)”, and Ibn e Majah at no 346 and Abu Dawood at no 22 and Nissay at no 30, about last three Sheikh Albany said, “Correct”.

 عن عبد الرحمن بن حسنة قال : انطلقت أنا و عمرو بن العاص فخرج علينا رسول الله صلى الله عليه و سلم و بيده درقة أو شبيه بالدرقة فاستتر بها فبال و هو جالس فقلت لصاحبي ألا ترى إلى رسول الله صلى الله عليه و سلم كيف يبول كما تبول المرأة قال : فأتانا فقال : ألا تدرون ما لقي صاحب بني إسرائيل كان إذا أصاب أحدا شيء من البول قرضه بالمقراض قال : فنهاهم عن ذلك فعذب في قبره ۔ (رواہ الحاکمؒ فی المستدرک)تعليق الذهبي قي التلخيص : على شرطهما، واحمدبن حنبلؒ فی مسندہ برقم 17793 و17795 وفی کلیہما تعليق شعيب الأرنؤوط : إسناده صحيح، وابو یعلیٰؒ برقم 932، قال حسين سليم أسد : إسناده صحيح وابن حبانؒ برقم 3127 قال شعيب الأرنؤوط : إسناد صحيح على شرط الشيخين ،وابن ماجہؒ برقم 346 ،وابوداودِؒ برقم 22 ، والنسائیؒ برقم 30 وفی ھذہ الثلاثۃ قال الشيخ الألباني : صحيح،

ترجمہ ۔ 657 – عبدالرحمن بن حسنۃ (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) سے روایت ہے کہ میں اور عمروبن العاص (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) چلے (کسی کام سے)، “تو رسول اللہ ﷺ ہماری طرف تشریف لے آئے ،اور آپ کے ہاتھ میں چمڑے کی ڈھال یا اس جیسی کوئی چیز تھی ، توآپ نے اس کو آڑ (ستر) بنایا اور (اوٹ میں) پیشاب کیا اوروہ بیٹھنے کی حالت میں( پیشاب کررہے) تھے تو میں نے کہا اپنے صاحب سے کیاآپ دیکھتے نہیں ہے رسول اللہ ﷺ کی طرف ایسے پیشاب فرماتے ہیں جیسے خاتون (بیٹھ کر) پیشاب کرتی ہے؟ ، کہا، تو آپ ہمارے پاس تشریف لائے اور ارشادفرمایا کیاآپ جانتے ہیں کیا (عبرتناک) پیش آیا بنی اسرآئیل کے صاحب (قوم کے آدمی) کو؟، کہ جب لگ جاتی کوئی چیز پیشاب (وغیرہ) کسی (کپڑے) کوتو وہ کاٹ ڈالتااس کو قینچی کے ساتھ، فرمایا تو روکا انہیں اس کام (پیشاب میں احتیاط نہ برتے )سے ، پس (احتیاط نہ برتنے پر) پس قبر میں اس کوعذاب دیا گیاِ”، ۔ (روایت کی ہے اس کی الحاکمؒ نے المستدرک میں)تعليق الذهبیؒ کی التلخيص میں ہے کہ دونوں (بخاریؒ اورمسلمؒ) کی شرط پرہے، اوراحمدبن حنبلؒ نے اپنی مسندمیں نمبر 17793 اور17795 پراوردونوں کے بارے تعليق شعيب الأرنؤوط کی ہےکہ إسناداس کی صحيح ہے، اورابو یعلیٰؒ نے نمبر 932 پر،کہا حسين سليم أسد نے إسناداس کی صحيح ہے اورابن حبانؒ نے نمبر 3127 پر کہا شعيب الأرنؤوط نے إسناد صحيح ہے شيخين (بخاریؒ اور مسلمؒ ) کی شرط پر،اورابن ماجہؒ نے نمبر 346 پر،اورابوداودِؒ نے نمبر 22 پر، اورالنسائیؒ نمبر 30 پر، آخری تینوں کے بارے کہاالشيخ الألباني نے صحيح ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *