Urine of an Infant be Washed

یصب الماءعلی بول الصبی وغسلہ

Urine of an infant be washed

بچے کے پیشاب پر پانی بہانا اور دھونا


1st Hadith Translation in English, Urdu & Arabic


Hadith No 215: Ayesha, mother the believers (Razi Allah o anho), verily, she said, “An infant was brought to Rasoolullah ﷺ ,he urinated upon him. He asked for water and poured upon it (the place of urine on clothing).” Narrated Al-Bukhari and at no 5878, and An-Nisay at no 303, Sheikh Albani said, “Correct”, and Ahmad bin Hanbal in his Musnid at no 24301, Taleek of Shoaib Alurnwoot is, “Chain of narrators is correct as per criteria of both Sheikhs (Bukhari and Muslim).

عن عائشة أم المؤمنين أنها قالت أتي رسول الله صلى الله عليه وسلم بصبي فبال على ثوبه فدعا بماء فأتبعه إياه۔ رواہ البخاریؒ وبرقم 5878، والنسائی برقم 303، قال الشيخ الألباني : صحيح واحمدبن حنبلؒ ومسندہ برقم 24301 ، تعليق شعيب الأرنؤوط : إسناده صحيح على شرط الشيخين۔

ترجمہ۔ حضرت عائشہ ام المؤمنین (رضی اللہ تعالیٰ عنہا) سے روایت ہےکہا کہ، “لایاگیا رسول اللہ ﷺ کے پاس ایک بچہ تو پیشاب کردیا اس نے آپ کے کپڑوں پر ، پس پانی منگایا اور اس پر ڈال دیا”۔روایت کی ہے البخاریؒ نے اورنمبر 5878 پر، اورالنسائی نے نمبر303 پر،کہا الشيخ الألبانی نے صحيح ہے اوراحمدبن حنبلؒ نے اپنی مسند میں نمبر24301 پر، تعليق شعيب الأرنؤوط کہ إسناداس کی صحيح ہے الشيخين (بخاریؒ اورمسلمؒ ) کی شرط پر۔


2nd Hadith Translation in English, Urdu & Arabic


Abd ur Rahman bin Abi Layla narrates from his father that, “I was with Holy Prophet ﷺ ,he brought Hussain (Radi Allahu anhu) with him, he (Hussain Radi Allahu anhu, was still child) urinated upon him. When he became free he poured some water on it (the place of urine on clothing).” Narrated Ahmad and Attibrany in (Mojim) ul Kabir, and narrators of this are all reliable.” (Addirayah fi Takhrij Ahadith ul Hidaya by Alhafiz Ibn e Hajar Askalany.)

وَعَن عبد الرَّحْمَن بن أبي لَيْلَى عَن أَبِيه قَالَ كنت عِنْد النَّبِي صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّم َ فجِئ بالحسين فَبَال عَلَيْهِ فَلَمَّا فرغ صب عَلَيْهِ المَاء رَوَاهُ أَحْمد وَالطَّبَرَانِيّ فِي الْكَبِير وَرِجَاله ثِقَات ، (الدراية في تخريج أحاديث الهداية ،الحافظ ابن حجر العسقلانيؒ)۔

ترجمہ۔ عبدالرحمن بن ابی لیلی اپنے اباجان سے روایت کرتے ہیں،کہاکہ، ” میں تھا نبی ﷺ کے پاس تو آپ کے پاس لایا گیا حسین (رضی اللہ تعالیٰ عنہ ،جو ابھی بچے تھے) کو، تو پیشاب کردیا اس (حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ ) نے ان پر ، پس جب فارغ ہوئے تو آپ نے پانی بہایا اس (کپڑوں پہ پیشاب والی جگہ پر) پر”۔روایت کی ہے اس کی احمدؒ اور الطبرانیؒ نے (معجم) الکبیر میں اور رجال (راوی) اس کے ثقات ہیں۔ (الدراية في تخريج أحاديث الهداية ،الحافظ ابن حجر العسقلانيؒ)۔


3rd Hadith Translation in English, Urdu & Arabic


Hadith No 216: Umme Qais bin Mohsin (Radi Allahu anhu) narrates that, “She came to Rasoolullah ﷺ with her infant, who did not start eating (solid foods) yet. Rasoolullah seated him in his lap. The infant urinated in his lap. Rasoolullah asked for water so, washed it and did not rinse it.” (Narrated Al-Bukhari and at no 5260 from her, with text (“I visited to Rasoolullah ﷺ with my infant being not fed with hard food, so, he urinated upon him, he asked for water and threw upon it”) and An-nisay at no 302 and Abu Dawood at no 374 and about both Sheikh Albany said, “Correct”, and Al-Bukhari headed a chapter, Washing of blood of menses, and a chapter Washing of blood, at no 220 and 296 with text “ثم لتنضحه بماء” (then you should wash it with water) and Al-Muslim a chapter, Pollution of blood and how to wash it, and narrated at no 438 with text ” ثُمَّ تَنْضَحُهُ” then wash it (clothes), and narrated Al-Muslim chapter “Almadyo” (Glairy water at time of sexual emotions) at no 458 with text “وَانْضَحْ فَرْجَكَ” means wash your sexual organ (Sharh Muslim Nawawi 3/213) and Al-Bukhari no 215 “فاتبعہ” means poured water where the urine (of infant) polluted, (Umdat ul Qari 33/136) and narrated in Al-Bukhari at no 137 “فرش على رجله اليمنى” means he poured water on his right foot till it was considered true to be washed (Sharh Muslim Nawawi 1/241) and narration in that text is “ولم یغسلہ” means did not rinse but only poured water and washed slightly as the requirement was. Allah has the best knowledge.

عن أم قيس بنت محصن أنها أتت بابن لها صغير لم يأكل الطعام إلى رسول الله صلى الله عليه وسلم فأجلسه رسول الله صلى الله عليه وسلم في حجره فبال على ثوبه فدعا بماء فنضحه ولم يغسله (رواہ البخاریؒ وبرقم 5260 عنہا بلفظ (“دخلت على النبي صلى الله عليه وسلم بابن لي لم يأكل الطعام فبال عليه فدعا بماء فرش عليه”) والنسائی برقم 302 وابوداودؒ برقم 374 وفیہما قال الشيخ الألباني : صحيح ) وبوب البخاریؒ ، باب غسل دم الحیض وباب غسل الدم ورواہ برقم 220 و 296 بلفظ “ثم لتنضحه بماء” ای لتغسلہ، والمسلمؒ باب نجاسۃ الدم وکیفیۃ غسلہ ورواہ برقم 438 بلفظ ” ثُمَّ تَنْضَحُهُ” ای تغسلہ ورواہ المسلمؒ فی باب المذی برقم 458 بلفظ “وَانْضَحْ فَرْجَكَ” فمعناه اغسله (شرح المسلمؒ للنوویؒ 3/213) ،و البخاریؒ برقم 215 وقوله “فاتبعه” أي فأتبع الماء البول يعني سكب عليه (عمدۃ القاری۔ 33/106) وورد فی الحدیث البخاریؒ برقم 137 “فرش على رجله اليمنى” أي سكب الماء قليلا قليلا إلى أن صدق عليه مسمى الغسل (النوویؒ شرح المسلمؒ 1/241)وفی الروایت ھذہ کلمۃ “ولم یغسلہ” ای لم یغسلہ بالتفصیل وانہ غسلہ بغسل خفیف حسب حاجتہ،وااللہ اعلم ۔

ترجمہ۔ أم قيس بنت محصن (رضی اللہ تعالیٰ عنہا) سے روایت ہے کہ، “بے شک وہ اپنے چھوٹے بیٹے کو جو ابھی کھانا نہیں کھاتا (شیرخوار) تھا لے کر آئیں رسول اللہ ﷺ کے پاس، تو بٹھالیا اس کو رسول اللہ ﷺ نے اپنی گودمیں، تو پیشاب کردیا اس نے آپ کے کپڑوں پر، پس پانی منگایا تو دھولیا اس (پیشاب ) کو اور (زیادہ مل دل کر) نہیں دھویا”۔ (روایت کی ہے البخاریؒ نے اور نمبر 5260 پر انہی سے ان الفاظ سے (“میں حاضر ہوئی رسول اللہ ﷺ کے ہاں اپنے بیٹے کے ساتھ جو ابھی کھانانہیں کھاتا تھا، تو اس نے پیشاب کردیا ان پر ، تو آپ نے پانی منگا کر اس پہ بہادیا”) اور النسائی نے نمبر 302 پر اور ابودواد نے نمبر 374پر کہا الشیخ البانیؒ نے صحیح ہے) اورباب باندھا ہے البخاریؒ نے، باب حیض کے خون کا دھونا اور باب خون کادھونا اور روایت کی ہے نمبر 220 اور296پر ان الفاظ سے “ثم لتنضحه بماء” یعنی”پھر تو دھولے اس کوپانی سے” ، اور المسلمؒ باب نجاسۃ الدم وکیفیۃ غسلہ اورروایت کی ہے نمبر438 پر ان الفاظ سے ” ثُمَّ تَنْضَحُهُ” پھر تو دھو لے اس(کپڑے) کو اور روایت کی ہے المسلمؒ باب المذی میں نمبر 458 ان الفاظ سے”وَانْضَحْ فَرْجَكَ”اس کامعنی ہےاس کو دھولے (شرح مسلمؒ النوویؒ 3/213)۔ اورالبخاریؒ نمبر 215 اس (راوی) کا قول کہ “فاتبعہ” یعنی پانی بہایا وہاں جہا ں جہاں پر پیشاب تھا (عمدۃ القاریؒ 33/136) اورواردہوا البخاریؒ کی روایت نمبر 137 میں “فرش على رجله اليمنى” یعنی تھوڑا تھوڑاپانی بہایا یہاں تک کہ اس کو دھونا ہی کہاجائے تو سچ ہوگا” (النوویؒ شرح المسلمؒ 1/241) اورروایت میں یہ جو لفظ ہے “ولم یغسلہ” یعنی خو ب مل دل کے نہیں دھویا بلکہ خفیف دھویا جتنی ضرورت تھی (اس کو پاک کرنے کی) واللہ اعلم۔ 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *