Wash Pre-Seminal Fluid and Make an Ablution

الغسل مقام المذی و الوضوء منہ

Wash Pre-Seminal Fluid (Mazzi) and Make an Ablution

مذی کا دھونا اور وضوء نیا کرنا


Hadith about Pre-Seminal Fluid (Mazzi) with Translation in English, Urdu & Arabic


Hadith No 261: Ali (Razi Allah o anho) narrates that, “I was a man with a lot of Mazzi, (discharging pre-seminal fluid), so, I sent a man (Al Miqdad bin Al Aswad Razi Allah o anho) to ask from Holy Prophet ﷺ (and inform me), because his daughter was at my home (I felt shy to ask) so, he asked, he (Rasoolullah ﷺ) answered purify by ablution (it breaks ablution) and (before that) wash your private organ.” (Narrated Al-Bukhari, and at no 129, 172 and Al-Muslim at no 456, 458 and Annisay at no 152, 193, 194 and Abu Dawood at no 206 and about both Sheikh Albany said, “Correct”, and Ahmad bin Hanbal at no 606, 618, 1009, 1026 and about all Taleek of Shoaib Alurnwoot is, “Chain of narrators is correct as per criteria of both (Bukhari and Muslim), and Abu Yaala at no 458, Hussain Salim Asad said, “Chain of narrators is correct”.

عن علي قال كنت رجلا مذاء فأمرت رجلا أن يسأل النبي صلى الله عليه وسلم لمكان ابنته فسأل فقال توضأ واغسل ذكرك۔ (رواہ البخاریؒ وبرقم 129، 172 والمسلمؒ برقم 456 و 458، والنسائیؒ برقم 152، 193،194، وابوداودؒ برقم 206 وفی کلیہما قال الشیخ البانیؒ صحیح، واحمدبن حنبلؒ برقم 606، 618، 1009، 1026 وفی کل تعليق شعيب الأرنؤوط : إسناده صحيح على شرط الشيخين وابویعلیٰ برقم 458 قال حسين سليم أسد : إسناده صحيح وابن حبانؒ برقم 1104 قال شعيب الأرنؤوط : إسناده صحيح على شرط البخاري)۔

ترجمہ۔   261۔  علی (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) سےروایت ہے کہ “میں ایسا آدمی تھا کہ مجھے مذی زیادہ آتی،میں نے ایک آدمی (المقدادبن الاسودرضی اللہ عنہ) کو بھیجا کہ نبی ﷺ سے پوچھے (اورمجھے بتائے) اس وجہ سے کہ ان کی بیٹی (میرے) گھر میں تھی(اور شرم کی وجہ سے میں نہیں پوچھ سکتا تھا) پس پوچھااس نے تو ارشادفرمایا، وضوء کر (یعنی اس سے وضوء ٹوٹ جاتاہے) اور اپنی شرمگاہ کو(پہلے) دھولے۔(روایت کی ہے البخاریؒ نےنمبر 129، 172 پراورالمسلمؒ نے نمبر 456 و 458، اورالنسائیؒ نے نمبر 152، 193،194پر وابوداودؒ نے 206 پر وفی دونوں کی روایات کے بارے کہاالشیخ البانیؒ نے صحیح، اوراحمدبن حنبلؒ نے نمبر 606، 618، 1009، 1026 پر سب کے روایات کے بارےتعلیق شعيب الأرنؤوط کی ہے کہ اسناد اس کی صحيح ہے الشيخين (بخاریؒ اور مسلمؒ) کی شرط پر اورابویعلیٰؒ نے نمبر 458 پر کہا حسين سليم أسد نے إسناداس کی صحيح ہے اورابن حبانؒ نےنمبر 1104 کہا شعيب الأرنؤوط نےإسناداس کی صحيح ہے البخاريؒ کی شرط پر)۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *