What is the Meaning of Divorce in Islam

ما معنى الطلاق في الإسلام

What is the Meaning of Divorce in Islam

اسلام میں طلاق کے معنی کیا ہیں؟

( Islam Main Talaq Ke Mahni Kiya Hain )

What is the Meaning of Divorce in Islam

English Urdu Arabic
Divorce means to leave a thing طلاق کا مطلب کسی چیز کو ترک کردینا ہے الطلاق یعنی ترک الشیء
In Islamic view, to cut the wedding relation شریعت میں طلاق نکاح کے تعلق کے کٹ جانے کو کہتے ہیں الطلاق فی الشریعۃ ،انقطاع تعلق النکاح
Inciting to avoid divorcing in The Holy Quran, Allah the owner of great splendor said, “(If you dislike them, you may dislike something wherein GOD has placed a lot of good) (19) A-Nisa) قرآن کریم میں طلاق سے بچنے کی ترغیب دی گئی ہے، اللہ عزوجل کاارشادہے۔ّ(پھر اگر تم انہیں پسند نہ کرو توشائد ایک چیز تم ناپشند کرتے ہو اور اللہ نے رکھی ہو اس میں بھلائی بہت زیادہ) (19) النساء ترغیب عن الطلاق فی القرآن، قال اللہ عزوجل [ فَإِنْ كَرِهْتُمُوهُنَّ فَعَسَى أَنْ تَكْرَهُوا شَيْئًا وَيَجْعَلَ اللَّهُ فِيهِ خَيْرًا كَثِيرًا (19) النساء]
Thinking about betterment before divorce. طلاق سے پہلےاصلاح کی فکر کرنا فکرالاصلاح قبل الطلاق
(And (as to) those on whose part you fear desertion, admonish them, and leave them alone in the beds and chastise them.) (34) A-Nisa) اورجن کی بدخوئی کا تم خوف کرو تو سمجھاؤ ان کواورجدا کرو ان کو سونےکی جگہوں میں اور ان کو مارو (ہلکا پھلکابغیرنشان ڈالے) (34) النساء [ وَاللَّاتِي تَخَافُونَ نُشُوزَهُنَّ فَعِظُوهُنَّ وَاهْجُرُوهُنَّ فِي الْمَضَاجِعِ وَاضْرِبُوهُنَّ ۔۔۔ (34) النساء]
Appointment of two arbiters from their relatives افہام وتفہیم کے لئے دو فیصلہ کرنے والے مقرر کرنا فَابْعَثُوا حَكَمًا مِنْ أَهْلِهِ وَحَكَمًا مِنْ أَهْلِهَا للإِصْلَاح
(And if you fear a breach between the two, appoint an arbiter from his people and an arbiter from her people. If they both desire agreement, Allah will effect harmony between them….(35) An-Nisa) اوراگر تم ڈرو کہ ضد ہے دونوں کے درمیان تو مقرر کرو ایک فیصلہ کرنے والا مرد والوں میں سے اورایک فیصلہ کرنے والا عورت والوں میں سے ، اگردونوں چاہتے ہوں اصلاح کرنا تو اللہ ان میں موافقت پیدا فرمادے گا۔۔۔(35) النساء [ وَإِنْ خِفْتُمْ شِقَاقَ بَيْنِهِمَا فَابْعَثُوا حَكَمًا مِنْ أَهْلِهِ وَحَكَمًا مِنْ أَهْلِهَا إِنْ يُرِيدَا إِصْلَاحًا يُوَفِّقِ اللَّهُ بَيْنَهُمَا ۔۔۔(35) النساء
Divorcing in Christianity عیسائیوں میں طلاق الطلاق فی النصاری
When a man divorced his wife and married another woman he has committed fornication (adultery) and if a woman divorced a man and wedded another man she has committed fornication (Injeel Muraqus 10:11-12) جب مرد اپنی بیوی کو طلاق دے اوردوسری عورت سے نکاح کرے تو اس نے زنا کیا اور اگر عورت اپنے شوہر کو طلاق دے اور کسی دوسرے مرد سےنکاح کرے تواس نے زنا کیا مرقس 10 :11۔ 12 – اذا طلق الرجل امْرَأَتَهُ ونکح امرۃ اخری فقد زنی وان طلقت زوجھا ونکحت رجلا آخر فقد زنت (انجیل ( مرقس 11:10-12)-
Divorcing in Jews یہود میں طلاق الطلاق فی الیھود
In Jews, only man was authorized to divorce and he could do it only in written form, and woman was not authorized to marry with an other man and after divorcing from another man with the first husband. (Journey of Tasniya 24:1-4) یہود میں صرف مرد کو طلاق کا اختیار تھا اور اس کی ایک صورت تھی کہ وہ تحیریری طور پرطلاق دے اورعورت کے لئیے جائز نہ تھا کہ وہ دوسرا نکاح کرے یاطلاق لے کر پہلے شوہر کی طرف رجوع کرلے۔(سفر التثنیۃ 24: 1-4)- کان رجل الیھود مخیر فی الطلاق ولا یکون الا بالتحریر ولا یجوزلھا نکاح الثانی والرجوع بعد الطلاق الی زوجھاالاول (سفر التثنیۃ 24: 1-4)-
Allah has forgiven the sins committed by heart until acted upon or spoken اللہ تعالیٰ نے وہ گناہ معاف فرما دئیے جو اس کے دل میں پیدا ہوئے  إِنَّ اللَّهَ تَجَاوَزَ مَا حَدَّثَ بِهِ َنفسه مَا لَمْ يْعْمَلْ أَوْ يْتَكَلَّمْ 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *