When Imam Recites in Salat, You Should Keep Quiet

وَإِذَا قَرَأَ الامام فی الصلاۃ فَأَنْصِتُوا

When Imam Recites in Salat, You Should Keep Quiet

جب امام نماز میں قراء ت کرے تو تم خاموش رہو


1st Hadith in English, Urdu & Arabic


Hadith No 931: Abu Musa Al Ashari (Razi Allahu anhu) narrates that Certainly, Holy Prophet ﷺ once addressed us and explained our manner and educated us about the salat, so he said, “When you perform salat, you should establish rows, after that, anyone out of you should become a leader (Imam). After this , when glorifies Allah (says takbir) you should also glorify Him, when he says ‘Wladaalieen’ (غَيْرِ الْمَغْضُوبِ عَلَيْهِمْ وَلاَ الضَّالِّينَ recites last verse of Fatiha), you should say ‘Aameen’.(Sahih Muslim)

فَقَالَ أَبُو مُوسَى۔۔۔۔۔۔ إِنَّ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- خَطَبَنَا فَبَيَّنَ لَنَا سُنَّتَنَا وَعَلَّمَنَا صَلاَتَنَا فَقَالَ « إِذَا صَلَّيْتُمْ فَأَقِيمُوا صُفُوفَكُمْ ثُمَّ لْيَؤُمَّكُمْ أَحَدُكُمْ فَإِذَا كَبَّرَ فَكَبِّرُوا وَإِذَا قَالَ غَيْرِ الْمَغْضُوبِ عَلَيْهِمْ وَلاَ الضَّالِّينَ فَقُولُوا آمِينَ۔۔۔مسلمؒ

ترجمہ۔ ابو موسیٰ الاشعری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے ہم سے خطاب فرمایا پس ہمارے لئے ہماری سنت بیان فرمائی اور نمازکی تعلیم دی،فرمایا جب تم نماز پڑھو تو صفیں قائم کرو پھر تم میں سے کوئی امام بنےپھر تکبیر کہے تو تم بھی تکبیر کہو جب غیرالمغضوب علیہم ولالضالین کہے تو تم اٰمین کہو۔ مسلمؒ ؒ 


2nd Hadith in English, Urdu & Arabic


Hadith No 932:  Jareer narrated from Suleman Attemy, and all these narrated from Qatadah with same chain of narrators an identical to this (the previous hadith No 931)…And in hadith of (narrated by) Jareer through Qatadah has an addition, “When he (Imam) recites (in salat) you should keep quiet.”….Abu Ishaq and Abu Bakr (two pupils of Imam Muslim) asked about (accuracy of) this hadith. Muslim answered, “Do you want a better memorizer than Suleman (means this hadith is correct)”. Then Abu Bakr (one of the students) asked about (accuracy of) hadith of (a same hadith in Nissay hadith no 921,922, narrated by) Abu Hurairah (Razi Allaho Anho) means “when imam recites, you should keep quiet”. Imam Muslim said, “That is Correct in my opinion.” He asked, “Why you did not place (narrated) it here (in your book)? He answered, “Everything is not (equally) correct. I have placed (narrated) this hadith (by Suleman) here (because) they (scholars) has conflux (ijma) upon it (Its accuracy).(Sahih Muslim)

أَخْبَرَنَا جَرِيرٌ عَنْ سُلَيْمَانَ التَّيْمِىِّ كُلُّ هَؤُلاَءِ عَنْ قَتَادَةَ فِى هَذَا الإِسْنَادِ بِمِثْلِهِ. وَفِى حَدِيثِ جَرِيرٍ عَنْ سُلَيْمَانَ عَنْ قَتَادَةَ مِنَ الزِّيَادَةِ « وَإِذَا قَرَأَ فَأَنْصِتُوا۔۔. قَالَ أَبُو إِسْحَاقَ قَالَ أَبُو بَكْرِ ابْنُ أُخْتِ أَبِى النَّضْرِ فِى هَذَا الْحَدِيثِ فَقَالَ مُسْلِمٌ تُرِيدُ أَحْفَظَ مِنْ سُلَيْمَانَ فَقَالَ لَهُ أَبُو بَكْرٍ فَحَدِيثُ أَبِى هُرَيْرَةَ فَقَالَ هُوَ صَحِيحٌ يَعْنِى وَإِذَا قَرَأَ فَأَنْصِتُوا. فَقَالَ هُوَ عِنْدِى صَحِيحٌ فَقَالَ لِمَ لَمْ تَضَعْهُ هَا هُنَا قَالَ لَيْسَ كُلُّ شَىْءٍ عِنْدِى صَحِيحٍ وَضَعْتُهُ هَا هُنَا. إِنَّمَا وَضَعْتُ هَا هُنَا مَا أَجْمَعُوا عَلَيْهِ.  مسلمؒ

ترجمہ۔ جریر نے سلیمان التیمی سے روایت کی ہے ، ان سب نے اسی (اوپر والی حدیث کی) سند سے ، قتادہ سے روایت کی ہے اسی طر ح (جیسے اوپر والی روایت ہے ،حدیث نمبر 931) اور جریر نے سلیمان سے اور اس نے قتادہ سے اضافی نقل کیا ہے ،” اور جب امام قراء ت کرے تو (تم مقتدی ) خاموش رہو” کہا ابو اسحاق اور ابو بکر (دو شاگردوں نے) اس حدیث کے (صحت ) کے بارے میں ، امام مسلم ؒ نے کہا کیا تو سلیما ن سے بھی زیادہ حافظ چاہتا ہے (یہ حدیث صحیح ہے) پھر ابو بکر نے کہا ، کیا ابوہریرۃ (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) کی حدیث (جو نسائی میں نمبر 921،922پر ہے ) کیا وہ بھی صحیح ہے ،یعنی “جب امام قراء ت کرے تو تم خاموش رہو”؟ کہا ، ہاں وہ بھی میرے نزدیک صحیح ہے ۔پھر پوچھا آپ نے اس حدیث کو یہا ں کیوں نہیں رکھا (یعنی اپنی کتا ب میں روایت نہیں کیا )؟ کہا ہر چیز میرے نزدیک(اس کتاب میں روایت کرنا) صحیح نہیں ہے ، میں نے صر ف اس میں رکھا (لکھا ) ہے جس (کی صحت ) پر (محدثین ) کا اجماع ہو گیا ۔(مسلمؒ)۔ 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *